اختلاف اور انتشار ( Abu Yahya ابویحییٰ )

 میرے مضامین پر لوگ بہت سے تبصرے کرتے ہیں۔ ان میں سے کچھ ایسے ہوتے ہیں جن میں لوگ میرے خیالات سے اختلاف کرتے ہیں ۔ مثلاً کچھ عرصہ قبل ویلنٹائن کے حوالے سے لکھے گئے ایک مضمون پر ایک صاحب نے مجھے ایک اختلافی ای میل بھیجا۔ ان کے ای میل میں اٹھائے گئے نکات پر میرا اطمینان نہیں تھا لیکن اختلاف چونکہ ایک شائستہ انداز میں کیا گیا تھا اس لیے میں نے اپنے مضمون کے ساتھ سائٹ پر وہ اختلافی کمنٹ بھی شائع کر دیا۔

اس دنیا میں اللہ تعالیٰ نے انسانوں کو جس امتحان میں ڈالا ہے آزادی اس کی بنیادی اساس ہے۔ اس آزادی کے نتیجے میں لوگ ایک دوسرے سے اتفاق اختلاف کرتے رہتے ہیں۔ اس حوالے سے مکالمے کا سلسلہ بھی جاری رہنا چاہیے۔ یہ کوئی مسئلہ نہیں۔ مسئلہ تب ہوتا ہے جب لوگ ایک دوسرے پر اپنی آرا اور خیالات ٹھونسنا شروع کر دیں ۔ ان کے جوابی دلائل سننے اور سمجھنے کے بجائے یکطرفہ طور پر اپنے موقف پر قائم رہیں۔ دوسروں کی بات سمجھنے اور ان سے دلیل مانگنے کے بجائے اعتراض، الزام اور مہم جوئی کا طریقہ اختیار کر لیا جائے ۔ پروپیگنڈے کی مہمیں چلائی جائیں ۔ لوگوں کی نیت اور اخلاص پر ایسے گفتگو کی جائے جیسے وہ دل کا حال جانتے ہوں ۔

یہی رویے معاشرے میں جمود اور انتشار پیدا کرتے ہیں ۔ جمود اس لیے کہ ایسی مہم بازی جھیلنا ہر شخص کے بس کی بات نہیں ہوتی۔ چنانچہ تخلیق کی نئی دنیا تعمیر کرنے والے حساس لوگ کونے میں دب کر بیٹھ جاتے ہیں ۔ انتشار اس لیے پیدا ہوتا ہے کہ جہاں علمی اور فکری اختلاف پر اہل علم کی شخصیت، کردار اور اخلاص کو ہدف بنالیا جائے وہاں لوگوں کا ہر شخص پر سے اعتبار ختم ہونے لگتا ہے ۔

اس لیے اختلاف رائے ضرور کیجیے مگر شائستگی کے ساتھ اور دوسرے شخص کو بھی حق دیجیے کہ وہ آپ کے ساتھ اختلاف کرسکے ۔

 

Posted in ابویحییٰ کے آرٹیکز | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

7 Responses to اختلاف اور انتشار ( Abu Yahya ابویحییٰ )

  1. noshaba says:

    Salam you r doing a wonderful job plz don’t give up your article was very good and true about ویلنٹائن. I shared it with alot of people.

  2. Kulsoom says:

    You r right. Aap k tamam articles say zehan k dareechay khultay hain.
    Allah aapko hamari hidayat ka zareyya banay. Aameen

  3. anonymous says:

    beautiful message …

  4. sabahuddin says:

    excellent. mere khiyal me hamare society ka sab se bara masla education ka he. na deen ki education he r na he duyna ki. jab education sahi ho gi,, too amal bhi sahi hoo jayee ga… mere khiyaal se as daiii ka kam aap loog he ker rahee hain, Allah Hum sab koo hidayat de . ameen.

  5. KhShaikh says:

    Salam,
    Yes; of course, you are right brother Abu Yahya… Magar chunke ba-hasiyat insaan to Allah nay sab ko barabar bayana ha,,, magar ikhtilaaf her jagah ha, rang-o-nasal, shakal-o-soorat, tabiyoton ka ikhtilaaf,,,, naram khu,,, tund khu… Quran maen hazrat-e-Insan ki siftaen Allah (Subha wa Ta’alla) nay khole ker bayan kar deen ha,,, Iss liyay zaroori nahen ke her koi aap kay khayalaat ka taeed karay,, her kissi ka baat cheet karnay ka andaaz mukhtalif hota ha….. to aisay maen,,, aadmi ka mazaj thanda he rahna chaeay, aur tahammul aur budbaari say her karhwi-kuseeli baat ko thandday dill say bardaasht ka jazba paida karna cheay.
    Allah hamara haami-o-nasar ho. Amin.
    With kind regards
    KhShaikh

  6. Qari Aziz ur rehman says:

    JAZAKALLAH O KHYRA.

  7. Amy says:

    Beautifully said. Jazak Allah khair

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *