انذار: ہمارے پیش نظر کیا ہے؟ (Abu Yahya ابویحییٰ﴿

 سلسلہ روز و شب از ابویحییٰ

انذار: ہمارے پیش نظر کیا ہے؟

انذار کے نام سے ہمارے نئے سفر کا آغاز ہورہا ہے۔ یہ صرف ایک رسالے ہی کا نہیں بلکہ ایک تحریک کا آغاز ہے۔ اس اس تحریک میں ہمارے پیش نظر کیا ہے، وہ کیا فکر ہے جو اس کام کے پیچھے ہے اسے واضح کرنے کے لیے ہمیں کچھ تفصیل کرنی ہوگی۔ آج ہم اس موضوع پر بات کریں گے۔

انذار: ایک بنیادی دینی کام

دین اس دنیا میں اللہ تعالیٰ  کی اس ہدایت کا نام ہے جو ہمیں یہ بتاتا ہے کہ اِس دنیا میں ہم کیا کریں گے جس کے نتیجے میں آنے والی دنیا میں ہمیں فلاح اور کامیابی نصیب ہوگی۔ یہ بات قرآن مجید میں جگہ جگہ بیان ہوئی ہے۔ مثلاً سورہ شمس میں اسے اس طرح بیا ن کیا گیا ہے:


’’نفس انسانی گواہی دیتا ہے اور جیسا کہ اللہ نے اسے سنوارا۔ پھر اس کی نیکی اور بدی اس کو الہام کی۔ بےشک فلاح پاگیا وہ شخص جس نے اسے پاک کیا اور نامراد ہوا وہ جس نے اسے آلودہ کیا، (الشمس-10-91:7)


فرد کے لیے اس نصب العین کو اگر ایک لفظ میں بیان کیا جائے تو قرآن مجید کے الفاظ میں یہ تزکیہ نفس ہے۔ ایمان اور عمل صالح کے دینی مطالبات پر جب پوری دیانت داری اور اخلاص نیت کے ساتھ عمل کیا جاتا ہے تو فرد تزکیہ نفس کی اس راہ پر چل پڑتا ہے جس کا نتیجہ جنت کی سرفرازی ہے۔


یہ تو ایک عام شخص کا معاملہ ہے۔ تاہم جب کوئی شخص انفرادی سطح سے بلند ہوکر معاشرتی سطح پر  کوئی کام مذہبی بنیادوں پر سر انجام دینا چاہے تو اس کی اساس قرآن مجید میں اس طرح بیان ہوئی ہے۔


’’اور سب مسلمانوں کے لیے تو یہ ممکن نہ تھا کہ وہ اس کام کے لیے نکل کھڑے ہوتے، لیکن ایسا کیوں نہ ہوا کہ ان کے ہر گروہ میں سے کچھ لوگ نکل آتے تاکہ دین میں بصیرت حاصل کرتے اورجب ان کی طرف لوٹتے تو اپنی قوم کے لوگوں کو انذار کرتے تاکہ وہ بچتے۔‘‘، (توبہ122:9)


یہ کام جس کا اس آیت میں ذکر کیا گیا ہے انذار کا کام ہے۔ انذار قرآن کریم کی ایک اصطلاح ہے۔ اس کا عام طور پر ترجمہ ڈرانے کے لفظ سے کیا جاتا ہے۔ تاہم یہ اس لفظ کی درست ترجمانی نہیں۔ اردو زبا ن میں ڈرانے کا لفظ بالعموم منفی معنوں میں استعمال ہوتا ہے۔ جبکہ انذار ایک مثبت لفظ ہے۔ اس کا صحیح مطلب اور مفہوم خبردار کرنا ہے۔ یہ کسی برے عمل کے انجام پر متنبہ کرنے کے لیے استعمال ہوتا ہے۔ تاہم برے عمل کا نتیجہ برا ہی ہوتا ہے اس لیے اس پس منظر میں اس میں خوف دلانے اور متنبہ کرنے کا عنصر شامل ہوجاتا ہے۔


قرآن مجید میں یہ لفظ اسی پس منظر میں رسولوں اورنبیوں کی ایک مستقبل صفت کے طور پر بیان ہوتا کہ وہ لوگوں کو اس حقیقت پر متنبہ کرتے ہیں  کہ اس دنیا میں وہ ایک شتر بےمہار کے طور پر نہیں چھوڑے گئے ہیں بلکہ ان کا ایک آقا اور مالک ہے جس کے حضور ایک روز انہیں پیش ہونا ہے۔ اس روز ان سے ان کے اعمال کا حساب لیا جائے گا۔ اچھے اعمال والوں کے لیے یہ انبیا و رسل جنت کی خوشخبری دیتے ہیں اور برے اعمال والوں کو اللہ کی پکڑ اور جہنم کی سزا سے متنبہ کرتے ہیں۔

Posted in ابویحییٰ کے آرٹیکز | Tags | Bookmark the Permalink.

12 Responses to انذار: ہمارے پیش نظر کیا ہے؟ (Abu Yahya ابویحییٰ﴿

  1. Moima Khan says:

    Sir – Salam Site ki opening ka sun kr bohat Khushi hui… Allah pak ap ko kamyabian ata frmay aur apni hifazat my rakhy….. Ameen.

    Plz mjhe add kr len aur update list my bhe shamil frma lain…

    Waisy sir kia hm ap ko dekh sakty aur ap sy mil sakty hyn ?

  2. Niaz Muhammad says:

    Al Hamdulillah….boht khushi hoi.Naiki k es Kaam me ham ap k sath ha.

    Jazakallah Khair.

  3. Atif says:

    Dear Sir,
    May Allah Almighty shower you with his blessings and make you successful in your mission towards reminding the fellow human beings to their real purpose of life in this temporary world.

    With best regards and wishes

  4. yousuf ahmed says:

    this is a great start.may ALLAH support you and protect you.

  5. Dilnawaz Khan says:

    asalam o alykum yahiyaa saab ki kitabein parhi me ny ALLAH PAK ny enha jo quran aur deen ki baseerat di hai wo balashuba allah ka buht barha karam hai r yahiyaa saab ny s ko nehayat emandari se estamal kiya hai.Allah pak enha hamesha salamat raky ta k kayi zindgiyaa allah pak enhi k zariye se raye e rast pay lata rahy ameen. ek guzarish ye hai k me app k s sadqaa jariya jesy kaam me app logaa ka sath dena chahta hun .tu mujy umeed hai k s kher k kam me yaqeenan app log mujy qabol kary gy

  6. Tariq Qasmi says:

    Assalam-o-Alikum,

    JazakAllah, I appreciate your struggle, and I have just read your book JAB ZINDAGI SHOORU HOOGI جب ژندگی شروع ھوگی and I appreciate your work.

    Thanks

  7. Amy says:

    Jazak Allah khair..

  8. Muhammed Asad Munir says:

    Respected Sir.
    Assalam o Alaykum,
    I just read your book “Jab zindgi shroo ho gi” . Its really a wonderful work, I am fully agree with your thoughts.
    Jazak Allah Khairah
    May Allah Rabul Izzat help you (ameen)

  9. Rubina says:

    Asalamualikum
    Allah aap ko jazae kher atta kare.aap ki books bohaat bohaat achi hai.aap ke is kam me hum aap ke sath hai. ALLAH aap ko kamyabia naseeb kare.
    (Ameen)

  10. bint-e-abdul Hameed says:

    inshaAllah inshaAllah Ta’la! RAB e RAHEEM O KAREEM k frishte ap ki taeed o nusrt frmayn ge.. ALLAH JALLE SHANA s dua’go hn k ap logo k paay’istqlal m kabhi laghzish na aay! amin suma amin! GREATST ALMIGHTY ALLAHs srvnts!!! u r great people! may HE protct u all!!! amin ya ALLAH SUBHANAHU WA TA’LA! suma amin!

  11. saqib javaid says:

    journey of million miles starting with step by step, slowly but surely it is towards right direction, Allah swt bless this initiative and those who are taking it to the next level

  12. Ayesha Asad says:

    Allah aap sub ka hami o nasir ho. aameen

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *