برمی مسلمانوں کے مسئلے کا حل (Abu Yahya ابویحییٰ)

Download PDF

 

برمی (روہنگیا) مسلمانوں کے مسئلے میں اپنا اصولی موقف ہم ایک دوسرے آرٹیکل میں بیان کر چکے ہیں کہ مسلمان اپنی غفلت کے باعث مجموعی طور پر ذلت کا شکار ہیں۔ اس طرح کے ظلم و ستم کے واقعات اسی ذلت و پستی کے لوازم میں سے ہیں۔ جب تک مسلمان ایمان، اخلاق اور دعوت کو اختیار نہیں کریں گے، مجموعی صورتحال کسی صورت نہیں بدلے گی۔ تاہم یہ سوال باقی رہتا ہے کہ اس وقت تک ہم اپنے بھائیوں پر ہونے والے ظلم و ستم پر کیا کریں ۔ اس حوالے سے ہمارا نقطہ نظر یہ ہے کہ اس طرح کے مسائل کا فوری حل ایک ہی ہوتا ہے اور وہ فوجی حل ہوتا ہے۔ بدقسمتی سے کوئی مسلمان ملک اتنا طاقتور نہیں کہ وہ فوجی طور پر میانمار پر حملہ کر کے اسے اپنا رویہ درست کرنے پر مجبور کرے۔

اس کے بعد مسلمانوں کے پاس ایک ہی راستہ ہے کہ غیر مسلم عالمی طاقتوں کو اس معاملے میں مداخلت کے لیے ابھارا جائے۔ اس کے دو طریقے ہیں۔ ایک یہ کہ اس مسئلے کو مسلمانوں کا مسئلہ بنانے کے بجائے انسانی مسئلہ بنائیں۔ غیر مسلموں کو مسلمانوں کے مسائل کے حل سے کوئی دلچسپی نہیں ہو سکتی۔ البتہ انسانی حقوق کے معاملے پر دنیا کی طاقتیں راست اقدام پر آمادہ ہو سکتی ہیں ۔ دوسرا یہ کہ مسلمان سیاسی، سفارتی، معاشی روابط اور ذرائع اختیار کرتے ہوئے بڑی طاقتوں پر زور ڈالیں کہ وہ اس مسئلے کو حل کرنے کی کوشش کریں ۔ ساتھ ہی جن ممالک کے لیے براہ راست میانمار پر دباؤ ڈالنا ممکن ہے جیسے ملائشیا وغیرہ وہ اس پر دباؤ ڈالیں ۔

آخری اہم بات یہ ہے کہ اس مسئلے میں مسلمانوں کی طرف سے کسی طور کا تشدد سامنے نہ آئے اور مسلمان سو فی صد پرامن رہیں ۔ تشدد ہمیشہ کمزور کو نقصان پہنچاتا ہے اور مسلمان اس وقت کمزور ہیں ۔ نیز اس سے مسلمانوں کا سیاسی اور انسانی مقدمہ بھی کمزور ہو گا۔

یہ گزارشات صرف برما ہی کے لیے نہیں ، باقی مسلم اقلیتوں کے مسائل کے حل میں بھی بہت اہم ہیں ۔ اس طرح امید ہے کہ مسلمانوں کے معاملات کچھ نہ کچھ بہتر ضرور ہوں گے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Posted in ابویحییٰ کے آرٹیکز, قومی اور بین الاقوامی مسائل | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *