سوائے ان کے ( Abu Yahya ابویحییٰ )

 

قرآن مجید کا آغاز سورہ فاتحہ سے ہوتا ہے۔ یہ سورہ دراصل ایک دعا ہے ۔ اس کا خلاصہ اگر کیا جائے تو یہ ہے کہ مانگنے والا یہ جانتا ہے کہ اس کا اور سارے جہانوں کا پالنے والا ایک انتہائی مہربان رب ہے۔ دینے والے نے مانگنے والے کے دست طلب کے جواب میں مادی نعمت کا ہر در کھول رکھا ہے ۔مگر مانگنے والا یہ جانتا ہے کہ بہت جلد ایک بدلے کا دن آ رہا ہے جب دنیا کی تمام مادی نعمتیں بے کار ہوجائیں گی۔ اس دن صرف ہدایت کی روحانی نعمت ہو گی جسے دے کر نئی دنیا میں جنت کا مادی نفع ملے گا اور جہنم کا ضرر دور ہو گا۔

یہی ہدایت کی دعا سورہ فاتحہ کا مرکزی خیال ہے اور پورا قرآن اسی دعا کا جواب ہے ۔ یہ ہدایت کلام الہی میں جابجا بکھری ہوئی ہے ۔ یہ ہدایت اللہ کو سب سے بڑھ کر محبوب بنالینے کا نام ہے ۔ یہ رب کی بندگی اور اس کی اطاعت کا راستہ ہے ۔ یہ والدین ، اقربا اور ضرورت مندوں پر احسان اور انفاق کا نام ہے ۔ یہ اپنوں ہی سے نہیں دشمنوں سے بھی عدل کرنے کا نام ہے ۔ یہ شرک، فواحش، منکرات، معصیت، بدعت اور خبائث سے بچ کر زندگی گزارنے کا نام ہے۔ یہ ہدایت امانت و دیانت، عہد و میثاق کی پاسداری، صدق و سچائی پر قائم رہنے کا نام ہے ۔ یہ غیبت، الزام، بہتان، جھوٹ، منافقت، ریاکاری سے دامن چھڑانے کا نام ہے ۔

اللہ کا بڑا احسان ہے کہ اس نے اپنی پاک کتاب میں اس ہدایت کی پوری تفصیل بیان کی اور پھر اس تفصیل کا خلاصہ اپنے محبوب کی بے مثل سیرت میں ہمارے لیے محفوظ کر دیا ۔ صاحب خلق عظیم کا اسوہ حسنہ اسی ہدایت کا چلتا پھرتا نمونہ تھا جس کی تفصیل آج بھی ہم جانتے ہیں ۔

ہدایت کے اس اہتمام کے بعد کوئی انسان گمراہ نہیں ہو سکتا۔ سوائے ان کے جو اپنے تعصبات کی وجہ سے خدا کے غضب کا شکار ہوجائیں ۔ سوائے ان کے جو اپنی خواہشات کا شکار ہوکر گمراہی کی پگڈنڈی پر چل پڑیں ۔ 

__________***_________

Posted in ابویحییٰ کے آرٹیکز | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

3 Responses to سوائے ان کے ( Abu Yahya ابویحییٰ )

  1. noshaba says:

    واقعی سچ لکھا ہے

  2. Amy says:

    Jazak Allah khair

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *