سپردگی (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حنا)

پروین سلطانہ حنا

سپردگی 

جیون کے بہتے ساگر میں

میں تو اپنی عمر کی ناؤ

مالک تجھ کو سونپ رہی ہوں

تیز ہوائیں تیرے تابع

موجیں تیری، رستے تیرے

جس سمت چاہے نیّا لے چل

تیری جانب دیکھ رہی ہوں

بھروسہ

خوشی ملی ہے جو یہاں

ترے کرم کی دین ہے

جو دکھ ملے مجھے یہاں

وہ آنسوؤں میں ڈھل گئے

نظر اٹھی تری طرف

دعا کے پھول کھِل گئے

مرے تمام راستے

تری طرف نکل گئے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Posted in Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

One Response to سپردگی (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حنا)

  1. Amy says:

    Beautiful. Jazak Allah khair

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *