غزل (Ahmed Bashir Tahir احمد بشیر طاہر)

احمد بشیر طاہر

 

نہ کوئی آنکھ ہو میلی نہ دل ہی کالا رہے

وہ نور دے کہ نہ کوئی بھٹکنے والا رہے

شعور و فکر کے ایسے چراغ دے ہم کو

جہالتوں کا کہیں ذکر نہ حوالہ رہے

نہ رہگزر، نہ کوئی رہنما ہو تیرے سوا

کہیں کلیسا و مندر ہو نہ شوالا رہے

چراغ علم کے ایسے ہمیں ودیعت کر

کہ ظلمتوں کا کہیں بھی نہ بول بالا رہے

میرے خدا ہمیں وہ روشنی عطا کر ، کہ

دئیے بجھا بھی دئیے جائیں تو اجالا رہے

۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔

Posted in Articles By Other Writers, Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *