غزل (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حناؔ)

Download PDF

 

پروین سلطانہ حناؔ

غزل

جنھیں ہم جان کہتے تھے انہی نے مان توڑا ہے

چھپا جو آرزو میں تھا وہی ارمان توڑا ہے

خلوص و درگزر، ایثار و الفت، ہے مری فطرت

تمہاری بے حسی نے یہ سروسامان توڑا ہے

محبت ضرب دو، تقسیم کر دو، اور پھیلا دو

یہ دستورِ محبت تم نے میری جان توڑا ہے

نئے رشتوں کو پا کر تم پرانے سب بھلا بیٹھے

یہ دل توڑا نہیں ، اک قیمتی انسان توڑا ہے

محبت کی فضا میں سانس لیتے اور جیتے تھے

ہمیں چھوڑا نہیں تم نے ہمارا مان توڑا ہے

ندا آئی ’’چلو اللہ کی جا نب‘‘ میں اٹھ بیٹھی

نمازِ فجر ہی چھوڑی نہ یہ فرمان توڑا ہے

نہیں بدلہ مگر احسان کا احسان ہی تو ہے

مگر تم نے تو یہ قرآن کا فرمان توڑا ہے

خدا کے نام کی تم لاج رکھ لیتے ضروری تھا

قسم توڑی نہیں تم نے مگر ایمان توڑا ہے

حناؔ اپنوں کی چاہت پر بڑا، ایقان رکھتی تھی

مگر بے رحم دنیا نے یہی ایقان توڑا ہے ۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

Posted in Articles By Other Writers, Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *