غزل (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حناؔ)

پروین سلطانہ حناؔ

غزل

ہستی فانی، مستی فانی

مت کر ناداں ، تو من مانی

حسن، محبت، اور جوانی

چڑھتے دریاؤں کا پانی

لوحِ زمیں پر وقت نے لکھ دی

اونچے محلوں کی ویرانی

دولت پر تم، ناز نہ کرنا

دولت تو ہے آنی جانی

دل ہے مرکز، حرص و ہوا کا

ہم نے دل کی ایک نہ مانی

حال مرا تم سے کہہ دے گی

میری آنکھوں کی طغیانی

تتلی کے پرَ چھو کر دیکھو

رنگوں سے لکھتی ہے کہانی

مجھ سے ملنے آ جاتی ہے

شام ڈھلے تو را ت کی رانی

رنگِ حناؔ بھی اڑ جائے گا

یہ ہے وقت کی ریت پرانی

۔۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔۔

Posted in Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *