غزل (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حناؔ)

پروین سلطانہ حناؔ

غزل

غم ہو کہ خوشی شاملِ جذبات رہے ہیں

وہ دور سہی پھر بھی مرے ساتھ رہے ہیں

ہو قرب مُیَسّر تو بہاروں کی طرح ہیں

اور ہجر کے موسم میں بھی برسات رہے ہیں

اِک دھوپ سی رہتی ہے مرے ساتھ ہمیشہ

اِک درد سے رو شن مرے دن رات رہے ہیں

احساس کی دنیا میں نئے نقش بنا کر

کچھ لوگ بڑی دیر مرے ساتھ رہے ہیں

پایا ہے کسی کو بھی، جو کھویا ہے کسی کو

ہاں ! باعثِ وہ ترکِ ملاقات رہے ہیں

لہریں ہوں کہ خو شبو ہو، ہوائیں ہوں کہ بادل

ایسے ہی پریشاں مرے حالات رہے ہیں

محبوبِ نظر ہے وہی جو جاں سے ہے پیارا

جاں دے کے ہی ملنے کے اشارات رہے ہیں

مہکار عجب ہے تِری خوشبوئے بدن کی

مسرور سے، مہکے ہوئے باغات رہے ہیں

جنت تمہیں مل جائے اگر صبر کے بدلے

اس صبر کے بدلے میں انعامات رہے ہیں

پوچھا جو کسی نے کہ حناؔ کیسی ہے لڑکی؟

سب حق میں تمہارے ہی جوابات رہے ہیں

۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔

Posted in Articles By Other Writers, Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *