غزل ( Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حناؔ)

Download PDF

پروین سلطانہ حناؔ

غزل

کرتی رہی سوال میں، دیتا رہا جواب وہ

آیا جو فیصلے کا دن، ہو گیا لاجواب وہ

ا س کا خطاب پُر یقین، اور لفظ لفظ دِل نشیں

دیکھئے غور سے اسے لگتا ہے اک کتاب وہ

وسعتیں اس کی بے کراں، محدود ہوں میں نا تواں

عرش سے لے کے فر ش تک بے حد و بے حسا ب وہ

نظروں کی جستجو نے تو ڈھونڈا اُسے ہر اِک جگہ

خو شبو ہے، پھول ہے کہیں، دلکش سا ماہتاب وہ

ہر شے میں جلوہ گر سہی، پھر بھی ہے وہ حجاب میں

دیکھا جو غور سے اُسے ہر سمت بے نقاب وہ

ذکر سے اُس کے سج گئیں ارض و سماں کی محفلیں

جتنے بھی بادہ خوار تھے، پینے لگے شراب وہ

خواب تھا جب تلک رہا میری نظر سے دور وہ

آیا قریب تو ہوا، اور بھی بے نقاب وہ

آب و ہوا سے رہ کے دور خاک نشیں تھیں خوشبوئیں

پا کے ہَوا کا لمس بھی، کھلنے لگا گلاب وہ

دلبر ہے، دل نشین ہے، اس پر مجھے یقین ہے

میں اس کا انتخاب ہوں اور میرا انتخاب وہ

رنگِ حناؔ ہے آج بھی پہلے سے بڑھ کے معتبر

جب سے مرے لئے ہوا، مو ضوعِ انتخاب وہ

۔۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔۔

Posted in Articles By Other Writers, Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *