غزل (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حناؔ)

پروین سلطانہ حناؔ

غزل

ہمارے پاس ہے جتنا، ہمارا کتنا ہے

جو ساتھ جائیں گے لے کے وہ سارا کتنا ہے

ہوا کی طرح گزرتے ہیں ماہ و سال اپنے

یہاں جو وقت گزارا، گزارا کتنا ہے

اسی کے ذکر سے ملتی ہے روح کو تسکیں

اندھیری رات میں اس کو پکارا کتنا ہے

اسی کے فضل و کرم سے گزر رہی ہے حیات

اسی کی ذات کا ہم کو سہارا کتنا ہے

جسے بھی دیکھو ہے مصروفِ روزگار یہاں

زیاں ہے کتنا یہاں پر، خسارا کتنا ہے

ہے آج جس پہ تصّرف وہ وارثوں کا ہے

ہمارا کیا ہے یہاں پر، تمہارا کتنا ہے

!وطن کی عزّت و دولت کو لوٹنے والو

اِسے بتاؤ کہ تم نے سنوارا کتنا ہے؟

اندھیرے دور ہوئے، چاندنی کی دستک سے

مرے نصیب کا روشن ستارا کتنا ہے

حناؔ یہ کشتی بھنور سے ضرور نکلے گی

پہنچ سے دور مری اب کنارا کتنا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Posted in Articles By Other Writers, Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *