غزل (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حنا ؔ)

غزل

پروین سلطانہ حنا ؔ

ہمارے شہر میں خوف و ہراس رہتا ہے

جسے بھی دیکھتی ہوں میں ، اداس رہتا ہے

بچھڑ گیا ہے وہ مجھ سے ، زمانہ لاکھ کہے

یہیں کہیں وہ میرے آس پاس رہتا ہے

یہ وضعداری کہاں ہے یہاں کے لوگوں میں

مگر ہمیں تو محبت کا پاس رہتا ہے

میں اپنے رَب سے بھلا دور کیسے ہو جاؤں

اندھیری رات میں وہ بن کے آس رہتا ہے

بھُلا کے اس کو یہاں لوگ کیسے جیتے ہیں ؟

مرے لئے تو ہمیشہ وہ خاص رہتا ہے

اُسی کے زیرِ نگیں ہیں زمین کے موسم

ہیں بُرج اس کے ہی تابِع، وہ راس رہتا ہے

وہ سامنے ہو تو ہر شے مجھے حسین لگے

وہ دور ہو تو یہ دل ناسپاس رہتا ہے

اسے بھی رنگِ حناؔ سے ہے ایک نسبت سی

وہ شخص خود بھی بہت خوش لباس رہتا ہے

٭٭٭٭٭٭

Posted in Articles By Other Writers, Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *