غزل (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حنا)

 

پروین سلطانہ حنا

سنو! کہ آج زندہ ہے

سنو! کہ آج زندہ ہے

جو کل گزرا تھا وہ لمحہ تو ماضی کا فسانہ ہے

جو آنے وا لا موسم ہے اسے بھی بیت جانا ہے

مگر جو آج کا رشتہ ہے کل سے وہ پرانا ہے

کہ ہم تو آج میں جیتے ہیں، مرتے ہیں

اسی میں سانس لیتے ہیں

یہی تو آج اپنا ہے

وہی حسنِ عمل اچھا ہے جو ہم آج کرتے ہیں

جو اچھا آج ہوتا ہے اسے کل یاد کرتے ہیں

وگرنہ بے ثمر لمحے فقط برباد کرتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Posted in Articles By Other Writers, Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *