غزل (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حنا)

پروین سلطانہ حنا

لبّیک اللّھمّ لبّیک

اے عرش والو! تمہارا مقام کیا کہنا

گلا مجھے بھی نہیں اپنی نارسائی کا

میرے نصیب پہ دیکھو عروج آیا ہے

ستارا میرے مقدّر کا جگمگایا ہے

کہ مجھ کو پھر میرے سرکار نے بلایا ہے

وہ دل نواز سی صبحیں ، وہ شام تو دیکھو

ہر ایک لب پہ درود و سلام، تو دیکھو

چلے جو سوئے حرم، وہ غلام تو دیکھو

مجھ ایسی خاک نشیں کا مقام تو دیکھو

گواہی دینا میری اے ہوائے خاکِ حرم

جہاں پڑ ے تھے رسولِ خدا کے پاک قدم

وہاں وہاں میں نے اپنی جبیں جھکائی ہے

اذانِ صحنِ حرم کی صدائیں جب گونجیں

شریک اُن میں میرے دل کی یہ گواہی ہے

خدائے پاک احد ہے کہ لا شریک ہے تو

ہر ایک تارِ رگِ جاں سے بھی قریب ہے تو

۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔

Posted in Articles By Other Writers, Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *