غزل (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حنا)

 

غزل

(پروین سلطانہ حنا)

پسِ منظرِ خزاں میں بھی بہار دیکھتی ہوں

جو سکونِ جسم و جاں ہے وہ قرار دیکھتی ہوں

تری چشمِ وا کو دیکھوں کسی نرگسی بدن میں

کبھی پھول پنکھڑی میں رخِ یار دیکھتی ہوں

کبھی رنگِ مہروماہ میں ، کبھی وسعتِ سماں میں

کبھی منظرِ شفق میں گلِ زار دیکھتی ہوں

کبھی سرمئی گھٹا سے ہے ترا جلال ظاہر

کبھی نرم گنگناتی سی پھوار دیکھتی ہوں

کبھی دن کے منظروں میں ہوئیں تجھ سے ڈھیر باتیں

تجھے رات میں بھی اٹھ کے کئی بار دیکھتی ہوں

تجھے دیکھنے کی چاہت میں جو دل میں آ بسا ہے

اسی طالبِ حقیقت کو بیمار دیکھتی ہوں

تری بخشش و عطا کے جو برس رہے ہیں موتی

انہی موتیوں کے پہنے ہوئے ہار دیکھتی ہوں

مرے شوق و جستجو کا ہے سفر ابھی ادھورا

یہ جو چڑھ رہا ہے دریا بے کنار دیکھتی ہوں

کبھی دل مرا بھر آیا، کبھی چشمِ نم کو پایا

جو خطاؤں پر ہے نادم دلِ زار دیکھتی ہوں

کہ رضائے حق سے بڑھ کر ہے حنا کوئی عبادت؟

تری بندگی کے رستے بھی ہزار دیکھتی ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Posted in Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

3 Responses to غزل (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حنا)

  1. Amy says:

    Jazak Allah khair

  2. Muhammad Usman says:

    issi shai’ra ki kesi book ka naam ager kesi saheb ko pata hai to bta dain.
    wesy ager sir abu yahya iss shai’ra py chotta sy review likh dain to acha rahy ga

    • Bashir Nazir says:

      Assalamu Alaykum

      Thank you for your comment.

      The poetess is the sister of Abu Yahya. Her book’s name is “میں ستارہ ہوں”. You can get the book by contacting +92332-3051201.

      Kind Regards
      Wassalam
      Bashir Nazir

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *