غزل (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حنا)

غزل

پروین سلطانہ حنا

سبحان ربی الاعلیٰ

میں تیرا ذکر کرتی ہوتی ہوں

تجھی سے بات کرتی ہوں

تری سوچوں میں رہتی ہوں

تجھی کو یاد کرتی ہوں

کوئی جب بات کرتا ہے

کوئی جب پاس آتا ہے

تسلسل ٹوٹ جاتا ہے

ترا میرا جو رشتہ ہے

کوئی کچا نہیں دھاگا

کہ اک جھٹکے سے جا ٹوٹے

اسے جس ڈور سے باندھا

وہ ہے مشروط سانسوں سے

کہ جب تک سانس باقی ہے

یہی اک آس باقی ہے

کہ میں نے عمر کی ناؤ

جو تجھ کو سونپ دی مولیٰ

وہ نیّا پار ہو جائے

کچھ ایسی بات بن جائے

کچھ ایسی بات ہو جائے

کہ جب پرواز ہو میری

میں اڑ کے عرش تک پہنچوں

ترے قدموں میں گر جاؤں

تو میرے پاس آ جائے

بہت نزدیک آ جائے

اٹھاؤں سر جو سجدے سے

ترا دیدار ہو جائے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

Posted in Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

2 Responses to غزل (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حنا)

  1. HMZ says:

    Subhana Rabbi yala’alaa

  2. Amy says:

    Beautiful. Subhan Allah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *