معافی کا رواج (Dr. Shehzad Saleem ڈاکٹر شہزاد سلیم)

Download PDF

ڈاکٹر شہزاد سلیم

محمود مرزا

معافی کا رواج

انسانوں سے غلطی یا گناہ سرزد ہوجانا ایک فطری عمل ہے۔ اکثروبیشتر ہم میں سے ہر شخص سے دانستہ یا نادانستہ طور پر بھول چوک اور غلطی ہو ہی جاتی ہے۔ بسا اوقات ایسا ہوتا ہے کہ ہم غلطیوں سے بچنے کی کوشش کرتے ہیں اور نتیجتاًپہلے سے بھی زیادہ غلطیاں کرنے لگ جاتے ہیں۔ تاہم کوئی بھی غلطی ہوجانے کے بعد اصل کرنے کا کام یہ ہے کہ انسان بے حسی کا مظاہرہ کرنے کے بجائے اپنی غلطی کو تسلیم کرے ، اس کا اعتراف کرے اور اس کے ساتھ ساتھ اگر اس غلطی کے نتیجے میں کسی شخص کی دل آزاری یا حق تلفی ہوئی ہے تو اس متعلقہ شخص سے فوراًمعافی مانگ لے اور تلافی بھی کر لے ۔

اہم بات غلطی کا ہونا نہیں ہے بلکہ اہم بات یہ ہے کہ غلطی ہوجانے کے بعد انسان کیا رویہ اختیار کرتا ہے ۔ جو رویہ درکار ہے وہ یہ ہے کہ غلطی کا احساس ہوجانے کے بعد انسان لازمی طور پر معذرت خواہ ہو اور اپنی غلطی کی فوراًمعافی مانگ لے ۔

اس میں کوئی شک نہیں کہ معافی مانگنا قطعاًآسان کام نہیں ہے بلکہ یہ ایک انتہائی مشکل کام ہے کیونکہ معافی مانگنے سے انسان دوسروں کی نگاہ میں بہت چھوٹا ہوجاتا ہے ۔ لیکن یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ وہی انسان معافی مانگنے سے خدا کی نظروں میں بہت بلند ہوجاتا ہے ۔

آیئے ہم سب مل کر اس معاملے میں حساس بنیں اور معافی کے رواج کو عام کریں ۔یہی رویہ دنیا و آخرت میں ہمارے لیے بہتر اور سودمند ہے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Posted in Articles By Other Writers | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *