کنفیوژن کا انجام ( Abu Yahya ابویحییٰ )

 قرآن مجید میں جگہ جگہ کفار کی ایک صفت ’’مریب‘‘ کے عنوان سے بیان کی گئی ہے۔ عام طور پر اس کا ترجمہ مبتلائے شک کیا جاتا ہے۔ مگر قرآن مجید نے تقریبا ہرجگہ اس لفظ کو ’’شک ۔۔‘‘ کے ساتھ استعمال کیا ہے۔ جس کے بعد ’’مریب‘‘ کا مفہوم وہی بن جاتا ہے جسے آج کل کنفیوژن کہا جاتا ہے ۔ یہ کنفیوژن یا الجھن انسان کو سچائی کو قبول کرنے سے روک دیتی ہے ۔ چنانچہ ایسے ’’مریب‘‘ شخص کا انجام قرآن مجید کے مطابق جہنم ہے ، (ق 25:50)۔ ساتھ میں قرآن مجید اپنے آغاز میں یہ بھی واضح کر دیتا ہے کہ اس کتاب میں کوئی شک نہیں ۔اس کے باوجود قرآن کے مخاطبین شک اور کنفیوژن میں پڑے رہے یہاں تک کہ جہنم میں جا پہنچے ۔

انسان کے کنفیوژن کی بنا پر اس انجام کو پہنچنے کا سبب ایک ہی ہوتا ہے۔ وہ یہ کہ انسان واضح ترین حقائق کو اپنے تعصبات کی بنا پر ماننا نہیں چاہتا۔ مگر وہ حقائق ایسے صریح ہوتے ہیں کہ انسان انکار بھی نہیں کرسکتا۔ چنانچہ انسان گومگو کی کیفیت میں مبتلا رہتا ہے ۔ مگر جیسا کہ سورہ ق کی آیت سے واضح ہے اس گومگو کو اللہ تعالیٰ بطور عذر قبول نہیں کریں گے اور ایسے لوگوں کو جہنم کی سزا سنائیں گے ۔

یہ وہ لوگ ہوں گے جن کے سامنے توحید کو آخری درجے میں واضح کر دیا جاتا ہے ۔ لیکن ان کے تعصبات انھیں گھما پھرا کر شرک کی طرف لے جاتے ہیں ۔ یہ وہ لوگ ہوتے ہیں جن کے سامنے بے گناہ اور معصوم بچوں اور عورتوں اور مردوں کا قتل عام برپا ہوتا ہے ۔ مگر وہ اپنے تعصبات کی بنا پر فیصلہ ہی نہیں کرپاتے کہ بے گناہ مقتول مظلوم ہے یا سفاکی سے قتل کر دینے والا مظلوم ہے ۔

قران مجید بالکل واضح ہے ۔ ایسے کھلے ہوئے ، واضح اور برہنہ حقائق کو دیکھ کر بھی کنفیوژ رہ جانے والے لوگوں کا انجام جہنم کی آگ کے سوا کچھ نہیں ۔ چاہے وہ اپنے آپ کو کچھ بھی سمجھتے رہیں ۔ چاہے وہ اپنے آپ کو کچھ بھی بتاتے رہیں ۔

________***__________***________

 

 

Posted in Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

2 Responses to کنفیوژن کا انجام ( Abu Yahya ابویحییٰ )

  1. noshba says:

    کراچی شہر اسکی زندہ مثال ہے جسکے آپ جیسے اہل دانش باسی ہیں مگر روز گھروں کے گهر اجڑ جاتے ہیں انسان ہی انسان کا خونی مذہب رنگ نسل زبان اور نئ ہوس سیاسی جماعت کی بیناد پر بےحس حکمران اپنے ایوانوں میں سورہے ہیں

  2. Amy says:

    Jazak Allah khair.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *