کٹھ پتلیاں (Parveen Sultana Hina پروین سلطانہ حناؔ)

Download PDF

 

پروین سلطانہ حناؔ

کٹھ پتلیاں

یاں تماشائے بزمِ عالم میں

ہم تو کٹھ پتلیوں کی صورت ہیں

ہے جو مشّاق ہاتھ قدرت کا

ڈوریاں سب وہی ہلاتا ہے

کھیل جتنا بھی ہے مقدّر کا

وہ بناتا ہے، وہ مٹاتا ہے

ہم تو بس خواہشوں کی مٹّی سے

اپنے کچّے گھڑے بناتے ہیں

تیز دریاؤں کی روانی میں

اور خود ہی انھیں بہاتے ہیں

کیا حقیقت حقیر مٹّی کی؟

سب گھروندے ہیں ٹوٹ جاتے ہیں

خانۂِ جاں کی تنگ گلیوں میں

خواہشوں کے تراش کر پیکر

اپنے اپنے دیئے جلاتے ہیں

کیا حقیقت دیئے کی لو کی ہے؟

سب ہوائیں وہی چلاتا ہے

کچھ دیئے جل کے بجھ بھی جاتے ہیں

کچھ دیئے بجھ کے جل بھی جاتے ہیں

ہم تو کردار بس نبھاتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Posted in Articles By Other Writers, Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *