کیا گزرے گی۔ ۔ ۔ ( Abu Yahya ابویحییٰ)

 

اس دنیا میں کسی سے محبت کی دو بنیادی وجوہات ہوتی ہیں۔ کبھی کسی کی کوئی خوبی یا ادا ہمیں بھاجاتی ہے ۔ رنگ، روپ، چہرہ، لب و لہجہ، انداز گفتگو، علم ، شخصیت غرض کسی بھی پہلو سے کوئی انسان اپنا نقش ہمارے دل میں قائم کر لیتا ہے۔ یا پھر کسی نے ہمارے ساتھ کوئی بھلائی کی ہوتی ہے ۔ جس کے بعد اس کی محبت، شفقت، احسان اور عنایت کا ایک نہ مٹنے والا تاثر دل و دماغ پرثبت ہوجاتا ہے ۔ مگرعجیب بات یہ ہے کہ اس دنیا میں جو ہستی اپنی خوبیوں اور اپنے احسانات دونوں اعتبار سے سب سے بڑھ کر ہے ، اور جو سب سے بڑھ کر انسانوں کی محبت کی مستحق ہے ، وہ انسانوں کی دنیا میں سرے سے قابل ذکر ہی نہیں ۔ وہ اللہ الرحمن الرحیم کی ہستی ہے ۔

قیامت قائم ہو گی ۔ سرکش و متکبر، ظالم و فاسق سب جہنم رسید ہوجائیں گے ۔ باقی لوگ اللہ تعالیٰ کی لطف و عنایت کی بنا پر جنت میں داخل کر دیے جائیں گے۔ لوگ نعمتیں پا کر خالق ارض و سماء کی مہربانی کے احساس سے سرشار ہوں گے ۔ پھر ایک روز اللہ تعالیٰ ان اہل جنت کو اپنے حضور طلب کریں گے ۔ ان سے پوچھیں گے کہ کیا تم میری نعمتیں پا کر خوش ہو۔ بندے عرض  کریں گے ، کیوں نہیں ۔ ہم صبح و شام ان نعمتوں پر آپ کی حمد کرتے ہیں ۔ پھر ان میں سے ایک ایک کو یہ بتایا جائے گا کہ پچھلی دنیا میں اللہ تعالیٰ نے اس کی بے خبری میں اس پر کیا کیا مہربانیاں کی تھیں ۔ اس کی جان مال عزت و آبرو کو کس طرح بچایا تھا۔ انھیں بغیر کسی حق کے کیا کیا نعمتیں دی تھیں ۔عجب نہیں کہ پھر کہا جائے کہ جو لوگ اُس بے خبری کے باوجود تڑپ کرصبح وشام میری حمد کرتے رہے ، وہ میرے قریب آجائیں ۔ باقی لوگ دور اپنی جگہ بیٹھیں رہیں گے ۔

اُس دن کیا گزرے گی دور بیٹھنے والوں پر۔ اُس روز کیا مقام ہو گا قریب آنے والوں کا۔ بڑا نصیب والا وہ ہے جس نے اس دن کے آنے سے پہلے قریب آنے کا راز سمجھ لیا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Posted in ابویحییٰ کے آرٹیکز | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

One Response to کیا گزرے گی۔ ۔ ۔ ( Abu Yahya ابویحییٰ)

  1. Muhammad Usman says:

    پتہ نہیں ایسا کیوں ہے کہ ہمیں موت کا یقین ہے بھی اور نہیں بھی ہے یا کم از کم یہ چیز ہمیں اکثر بھولی رہتی ہے اس کا پتہ نہیں کیا علاج ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *