ہمارا سفر کیوں کر شروع ہو (Farah Rizwan فرح رضوان)

 

اللہ تعالیٰ بار بار کچھ قیمتی دن بھی ہم عادی مجرموں کو نیکی کرنے اور گناہوں سے بچنے کا عادی بنانے کے لیے بھیجتے ہیں۔ ہم گناہوں کی دلدل میں پڑے، شیطان کے مایوسی، ڈپریشن، لذت گناہ اور کم ہمتی کی ڈوریوں سے بنے جال میں اللہ کی رحمت سے دوریوں کا شکار ہونے کو ہوتے ہیں کہ رمضان اپنی پوری آب و تاب سے ہم پر چھا جاتا ہے۔ تب ہم شیطان کے مکر کے جال کو مکڑی کے جالے کی طرح آن واحد میں توڑ پھینکنے میں کامیاب ہو جاتے ہیں۔

نیک بننے کی خوب پریکٹس کرتے ہیں اور دل سے توبہ بھی کرتے ہیں – عید کے بعد شوال کے روزے بھی ہوتے ہیں۔ دھیرے دھیرے وعدے بھولنے لگتے ہیں کہ حج کا موسم، ذو الحجہ کے قیمتی دن آ جاتے ہیں۔ لیکن سوال یہ ہے کہ سالہا سال کی زندگی اوربار بارآتے قیمتی ایام ملنے کے باوجود بھی۔ آخر ہمارا عادی مجرم سے متقی بننے کا سفر کیوں شروع نہیں ہو پاتا؟

آپ دن میں کتنے برتن توڑ کر پھینکتے ہیں؟ نہیں؟ یہ کیسے ممکن ہے؟ کھانا تو بار بار کھاتے ہوں گے؟ تو؟ اچھا دھو لیتے ہیں گندے برتن کو۔ مگرسوچیں کہ اگر ہم یہ نہ کرتے اور ہر کھانے کے بعد میلے ہو جانے والے برتنوں سے مایوس ہو کر ان کو پھینک دیتے تو سب کچھ کما کما کر بس اسی پر گنوا دیتے اور ساتھ ہی زمین پر ہمارے رہنے کی کوئی جگہ بھی باقی نہ رہتی۔ تو آخر ہم گناہ کر کے خود کو میلا کر لینے کے بعد اللہ تعالیٰ کی رحمت سے کیوں اتنا مایوسی کا شکار ہو جاتے ہیں؟ کہ گویا اب ہم پاک ہی نہیں ہو سکتے یا یہ کوئی بہت ہی طویل پراسیس ہو ۔

کیسی کیسی ناسمجھی میں مبتلا ہوکے اپنا آپ گنواتے ہیں کہ میں تو گناہ گار ہوں دعا کیسے کروں۔ نماز کیسے پڑھوں۔ نیک عمل کیسے کروں؟ قرآن کیسے پڑھوں۔ قرآن فون میں نہیں رکھتے کہ بے حرمتی ہوتی ہے۔

یقین کریں کہ قرآن کو نہ پڑھنا، نہ سمجھنا بھی اس کی بے حرمتی ہے، ورنہ تو جیسے ایک حافظ کے ذہن میں قرآن محفوظ ہوتا ہے اور وہ واش روم بھی جاتا ہے اور نارمل زندگی بھی گزارتا ہے، اسی طرح آپ خواہ کہیں بھی جائیں، فون کے کسی فولڈر یا کسی ایپ میں قرآن بھی بالکل محفوظ رہتا ہے کوئی بے حرمتی نہیں ہوتی۔ اسی طرح قرآن کو پڑھتے ہوئے وضو کا ہونا اچھی بات ہے لیکن فرض یا واجب ہرگز نہیں، اور جہاں تک چھونے کا معاملہ ہے تو پیپر پر لکھے ہوئے قرآن کے ٹیکسٹ کو بغیر وضو کے نہ چھوئیں باقی کسی بھی طرح بیشک شروع میں تین، پانچ یا سات آیات ہی پڑھنے سے ابتدا تو کریں۔

دوسری گتھی یہ ہے کہ قرآن درست پڑھنا نہیں آتا، تو گناہ ہو گا کا اتنا وہم! حالانکہ اس قدر آسان سا حل ہے کہ آپ کے فون میں، ٹیبلٹ پر کسی بھی ویب سائٹ پر بہت آسان بالکل فری سہولت موجود ہے کہ جو آیت یا لفظ آپ چاہیں وہ کسی بھی پسند کے قاری کی آواز میں سنیں اوردہرا کر خود کو درست کر لیں اور ساتھ دوہرا اجر بھی پائیں۔

قرآن سمجھ میں نہیں آتا یہ دوسرا مسئلہ ہے، لیکن کوئی بات نہیں دعا اور کو شش سے یہ بھی حل ہو جانا ہے مگر یہ کوئی وجہ نہیں قرآن نہ پڑھنے کی۔ کیا آپ کو بخار یا سر درد ہوتا ہے تو آپ دوا کے اجزا اور ان کے تناسب کے علم پر عبور حاصل کرنے میں جان ہلکان کرتے ہیں یا بس ایکسپائری ڈیٹ دیکھ کر دو گھونٹ پانی کے ساتھ اسے حلق سے اتار لیا کرتے ہیں؟ تو بس فی الحال صرف اتنا ہی وقت، جتنا دو گولی ڈسپرین کو گھلنے میں لگتا ہے، کم از کم اتنا تو ضرور ہی قرآن پڑھنے کے لیے لگائیں، کیونکہ جس طرح ہر چیز کی ایک ایکسپائری ڈیٹ ہوتی ہے، ہر انسان کی بھی ہوتی ہے۔ اور جس طرح بہت سی چیزیں ایکسپائری ڈیٹ کے بعد بھی بظاہر اچھی بھلی دکھائی دیتی ہیں ایسے ہی انسان بھی بظاہر جی تو رہا ہوتا ہے مگر اس کا ذہن کچھ بھی سمجھنے سے قاصر ہو جاتا ہے۔ ذہنی طور پر درست ہو تب بھی دل پر مہر لگ جاتی ہے، نہ اندر کا گند باہر نکل پاتا ہے نہ ہی باہر سے کوئی صاف شے اندر جا پاتی ہے۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کو ’’ارذل العمر‘‘ سے محفوظ رکھے آمین ۔

اور اب ایک آخری سوال کہ دل نہیں چاہتا، سمجھ نہیں آتا، وقت نہیں ملتا لیکن پھر بھی ہم قرآن کیوں پڑھیں؟ اس کا جواب انتہائی طویل ہے۔ مگر کیونکہ ہمیں تو ابھی بس کچھ وقت ہی دینے پر خود کو راضی کرنا ہے تو بس اتنی سی بات سمجھ لیں کہ، قرآن پاک میں ہی اللہ تعالیٰ نے وارننگ دی ہے کہ جو قرآن سے اعراض برتے گا اللہ تعالیٰ اس کی معیشت تنگ کر دے گا۔ اور بزرگوں کا کہنا ہے کہ یہ معیشت والی بات صرف دو دن کی دنیا کی دو وقت کی روٹی کی نہیں بلکہ مرنے کے بعد، حشر کے روز، اور اس کے بعد ہمیشہ ہمیشہ کی زندگی میں معیشت کی تنگی کی بات ہے۔ آخرت کے محل، انعامات آسائشات سبھی کچھ اس ایک لفظ، ’’معیشت ‘‘میں شامل ہے۔ آج اس دنیا میں ہی گھر، سواری، عزت، خوشی، سکون، بے فکری آخرکیا مل سکتا ہے فقط ایک ’’معیشت‘‘ کی تنگی کے بعد؟

ہم سمجھتے ہیں کہ ذکر اور قرآن سے جڑے رہنا صرف بے حد متقی لوگوں ہی کی تقدیر ہے حالانکہ یہ اصل میں تدبیر کا معاملہ ہے، لیکن تدبر کا وقت ہے کس کے پاس؟

اگر اب بھی اس ذات سے گناہ بار بار ہوتے ہیں، ہراگلے قدم پر یہ وسوسہ جان چھوڑ کر نہیں دیتا، تو کسی دو تین بچوں کی ماں کی زندگی پر غور کریں کہ دن رات بچوں کے گندے ڈائپر بدلتے اس کے ہاتھ سینکڑوں بار گندے ہوتے ہیں، تو کیا ہوتا ہے؟ وہ ہر بار ہاتھ دھوتی ہے اورانہی ہاتھوں سے کھانا کھاتی بھی ہے پکاتی بھی ہے اور کھلاتی بھی ہے، بس یہی گناہوں کا بھی حل ہے کہ جوں ہی ہوں توبہ کریں اور نیکی پر پلٹ آئیں۔ سوچنے والی بات ہے نا کہ ہم سب آئے دن دیکھتے ہیں کہ ناممکن لگنے والے کام کس قدر آسانی سے ہوتے چلے جاتے ہیں، کبھی ذرا سی کوشش سے کبھی کسی کے ساتھ دینے سے، کبھی کسی کے ساتھ رہنے سے، تو بس دعا، کوشش، اچھی صحبت کو اختیار کیجیے ان شاءاللہ آسانیاں میسر ہونگی ۔

۔۔۔۔۔۔۔***۔۔۔۔۔۔۔

Posted in Articles By Other Writers, Uncategorized | Tags , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

One Response to ہمارا سفر کیوں کر شروع ہو (Farah Rizwan فرح رضوان)

  1. Shaukat says:

    Subhan Allaha

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *