About Abu Yahya

Download PDF

بسم اللہ الرحمن الرحیم

ابویحییٰ  ایک پاکستانی اسکالر ہیں ۔ان کی تصنیف ’’جب زندگی شروع ہوگی‘‘ دور جدید میں اردو زبان کی سب زیادہ پڑھی جانے والی کتاب بن چکی ہے۔ یہ کتاب ایک لاکھ سے زیادہ کی تعداد میں شائع ہوچکی ہے۔ اس کے علاوہ ادارہ منشورات کے تحت ابویحییٰ  کی دیگر کتب کے ساتھ یہ کتاب ہندوستان سے بھی شائع ہورہی ہے۔ جبکہ ملک کے اندر اور باہر اس کتاب کے متعدد غیرقانونی ایڈیشن کی فروخت اس کے علاوہ ہے۔ کئی ملکی اور غیر ملکی زبانوں میں اس کتاب کے تراجم ہوچکے ہیں جن میں سے کتاب کا انگریزی ترجمہ When life Begins کے نام سے شائع ہوکر پاکستان اور بیرون ملک بڑی تعداد میں پھیلا ہے۔ یہ دونوں کتابیں ای بک کی شکل میں بلامعاوضہ انٹرنیٹ اور ای میل پر دستیاب ہیں۔ اس شکل میں بھی یہ کتاب لاکھوں کی تعداد میں انٹرنیٹ اور ای میل  کے ذریعے سے دنیا بھر میں پھیلی ہے۔

’’جب زندگی شروع ہوگی‘‘ کی تالیف کے زمانے میں مصنف کو اللہ تعالیٰ  نے شادی کے ایک طویل عرصہ بعد صاحب اولاد کیا تھا۔ اسی مناسبت سے انہوں نے بطور شکر گزاری ابو یحییٰ  کی کنیت عرب روایت کے مطابق اختیار کی اور اپنی اسی کنیت کے ساتھ کتاب کو شائع کیا  جسے اللہ تعالیٰ  نے غیر معمولی مقبولیت عطا فرمائی۔ اس سے قبل ابو یحییٰ   اپنے ذاتی نام ریحان احمد یوسفی کے نام سے لکھا کرتے تھے۔

ابو یحییٰ نے علوم اسلامیہ اور کمپیوٹر سائنس میں فرسٹ کلاس فرسٹ پوزیشن کے ساتھ آنرز اور ماسٹرز کی ڈگریاں حاصل کی ہیں جبکہ ان کا ایم فل سوشل سائنسز میں ہے۔ ابو یحییٰ  نے بطور ایک عملی صوفی اور بریلوی پس منظر کے ساتھ نوعمری میں  اپنے مذہبی سفر کا آغاز کیا۔ تاہم آزادانہ غور و فکر اور مطالعے کی وسعت کی بنا پر فرقہ وارانہ تعصبات اور مسلکی وابستگی سے بلند ہوتے چلے گئے۔  اپنے علمی سفر میں جن بزرگوں سے غیر معمولی استفادہ کیا ان میں مولانا احمد رضا خان صاحب فاضل بریلویؒ، مولانا اشرف علی تھانویؒ، مولانا سید ابوالاعلیٰ مودودیؒ، مولانا سید ابو الحسن علی ندویؒ، مولانا امین احسن اصلاحیؒ، ڈاکٹر اسرار احمدؒ صاحب، مولانا وحید الدین خان صاحب اور علامہ جاوید احمد صاحب غامدی کے نام نمایاں ہیں۔ مصنف کے بارے میں مزید تفصیلا ت ان کی کتاب ’’تیسری روشنی‘‘ کے دوسرے باب میں پڑھی جاسکتی ہیں، جس میں انھوں نے اپنے حالات زندگی تفصیل کے ساتھ بیان  کیے ہیں۔

ابو یحییٰ سن 2002 سے قبل جزوقتی طور دعوت دین کا کام کررہے تھے۔ تاہم اس کے بعد اپنے باقاعدہ معاش کو ترک کرکے کل وقتی طور پر تحریر و تقریر کے ذریعے سے لوگوں میں ایمان و اخلاق کی دعوت پھیلانے کی جدو جہد کررہے ہیں۔ اس کے علاوہ ٹیلیوژن پروگرام، اخباری مضامین، پبلک اجتماعات کے ذریعے سے بھی دعوت و اصلاح کا کام کرتے رہے ہیں۔ ابتدا میں وہ دانش سرا پاکستان سے وابستہ ہوئے۔ سن 2008 میں بطور ایسوسی ایٹ فیلو المورد سے وابستہ ہوئے۔ سن 2009 میں کراچی کے مضافات میں لوگوں کی اخلاقی اصلاح اور تربیت کے لیے ایک خانقاہ قائم کی۔ سن 2013 میں انہی مقاصد کے حصول کے لیے انذار کے نام سے ایک ادارہ قائم کیا۔ وہ اسی نام سے نکلنے والے ایک رسالے ’’ماہنامہ انذار‘‘ کے مدیر بھی ہیں جس میں ان کے مضامین ہر ماہ شائع ہوتے ہیں۔ یہ مضامین ان کی ویب سائٹ  www.inzaar.org  پر بھی پڑھے جاسکتے ہیں۔

ان کی کتب میں ’’جب زندگی شروع ہوگی‘‘ کے علاوہ ’’قسم اس وقت کی‘‘، ’’قرآن کا مطلوب انسان‘، ’’بس یہی دل‘‘، ’’حدیث دل‘‘ اور ’’تیسری روشنی‘‘ نمایاں ہیں۔ ان کی پہلی تصنیف ’’مغرب سے مشرق تک‘‘ تھی جو کینیڈا، امریکہ اور سعودی عرب کا سفرنامہ تھا۔ ان کی دوسری تصنیف ’’عروج و زوال کا قانون اور پاکستان‘‘ تھی۔ یہ دونوں کتب جو ابتدائی زمانے میں شائع ہوئیں علمی و ادبی حلقوں میں غیر معمولی پذیرائی حاصل کرچکی ہیں۔ اس کے علاوہ ابویحییٰ  نے درجن سے اوپر مختصر تصانیف اور اصلاحی کتابچے بھی لکھے ہیں۔

ابو یحییٰ صاحب کئی برس تک درس قرآن مجید بھی دیتے رہے۔ پچھلے پندرہ برسوں سے وہ قرآن مجید پر ایک تحقیقی کام کررہے ہیں جس کا مقصد قرآن مجید کے آفاقی پیغام، استدلال، مطالبات کو منظم و مرتب انداز میں پیش کرنا ہے۔ ان سے براہ راست رابطے کے لیے ان کے ای میل abuyahya267@gmail.com  پر رابطہ کیا جاسکتا ہے۔ 

Posted in ابویحییٰ کے آرٹیکز | Tags , , , , , , , , , , | Bookmark the Permalink.

12 Responses to About Abu Yahya

  1. Kulsoom Ali says:

    Abu yahya sahab ki books parh kr, unki ilmi qaableyat ki dil say qaael hogye hu. Bohat he qaabil insaan hain.
    bohat zyada impress hu mai, unki tasanef say.Allah unko umar e daraz day, taakay hm unki tasaanef say mustafed ho sakain.(Aameen)

  2. anonymous says:

    Just re-read his book “Qasm us waqt ki”, an amazing and touching piece of work with sound reasoning and intense appeal to human intellectual pursuit. A true masterpiece.

  3. qurratula ain says:

    i v read ur book JAB ZINDGI SHURU HO GI .before reading this ,i never liked the islamic type of books having high elaborations and so on …….but this book is written in such a unique and touching way that the person of new generation cant help reading it whole and it has such a strong impact on mind that one can not come out of its influence.welldone sir Abu Yahya.u really did a great job.

  4. arifa dar says:

    ap bohut shandar likhty hain.

  5. Amy says:

    Its good to know about the the author who is influencing so many through his writings. Jazak Allah khair.

  6. mohammed abduljaleel says:

    very good job jazakallah qairun

  7. Madiha says:

    Wonderful writer I have ever read. His article and Novels are very heart touching. He is playing very vital role in character building of Nation.
    Jazak Allah
    Ameen

  8. safdarali says:

    Aap ki kitaab JUB ZINDAGI SHIRO HOGI parhi yaqeen janiya kitna skoon or fikry akhrit hasil hui bian krny ko alfaz ni han mery pass.ALLAH PAK aapko ajry khair ata kry.or sda aisy hi deen ki khidmat krty rhyn .ameen.,mari aap sy ek iltija h jnaab k agr aap tak mery ye alfaz phanch jyn to KHUDA kaliya is wqat hum musalman jis munafqat or intihaa sy ziadagiri hui ikhlaqi buraiyoun m gir choky hn.jis ki pdash m khuda k azaab m aisy bury toor py jchry jaa chuky hn.k aaj hum puri duniyain m ek mzak or tmasha ban kr rhy gyn hn.kitne FIRKY bun chuky hn hum?agr quraani ahkmaat sy apna mouzna krty hn hum to hum KAHAN khry han aaj.KHUDA raa kuch kryn.

  9. Neelam says:

    “Jab Zindagi Shuro Ho Gi” remarkably a splendid book which influenced me in a way that i started questioning myself,,,,, what am i doing? why i am wasting so much time??? The writer is actually a blessed person from ALLAH ALMIGHTY and he deserves to be appreciated.
    Well done, sir, you are actually doing the kind of work which we suppose to do as an Ummah. May ALLAH ALMIGHTY bless you & your family in here & hereafter, Ameen

  10. Muhammad Usman says:

    بہت خوب سر اللہ پاک آپ کی عمر میں صحت اور برکت دیں

  11. sarah says:

    Sir Abu yahya ki books Parh kr boht se log badal chukey hain,mene sache dil se Allah pak se sajde mein gir kr sachi hadayat maangee Aur uske thoree he deir baad Muje meri walida ne itefaqan Inki kitaab ” jab zindagi shuru hogee” thama dee,Aur Usko Parh k meri zindagi ka maqsad he badal gea, mene Allah pak se haq Manga Muje haq mil gea, ab quran bhi samajh k parhna shuru kr dea hai,alhamdolilah,, sir Abu yahya k liye mera message hai k tanqeed ko nazar Andaaz kr k Apne mission ko jaareee rakhein,

  12. Zahoor Elahi says:

    Please provide full translation in English or a English web site so us no-urda speakers can benifit from your great works
    King regards
    Zahoor Elahi

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *